Hadeeth No. 5 Ahadeeth Pertaining to Repentance

Hadeeth no. 5

Ahadeeth Pertaining to Repentance, Admonition
& Softening of the Heart

Taken from
Silsilah Ahadeeth As-Saheehah

of
Shaykh Muhammad Nasiruddeen Al-Albaani

Translated
by
Abbas Abu Yahya



From al-Aayzaar bin Jarool al-Hadrami who said: there was a man amongst us called Abu Umayr, and he was placed as a brother to Abdullaah bin Mas’ood. 

Abdullaah would come and visit him in his house. 

So, one day he came and did not find him in the house, so he entered while his wife was there.

Al-Aayzaar continued saying:
‘While he was there Abu Umayr’s wife sent her maid out for a need, but she was slow in returning back, so the wife of Abu Umayr said: ‘She has been slow, may Allaah curse her!’

Al-Aayzaar said: ‘So Abdullaah went out and sat at the door, and when Abu Umayr came he said to Abdullaah: ‘Why did you not enter your brother’s house?’

Abdullaah said: ‘I did, but your wife had sent her maid out for a need, she was slow in returning to her, and she cursed her, and indeed I heard the Messenger of Allaah ﷺ saying:


إذا خرَجَتِ اللعنةُ من فِي صاحبِها نظَرَتْ، فإن وجَدَتْ مَسلَكًا في الذي وُجِّهَتْ إليه، وإلا عادَتْ إلى الذي خرَجَتْ منه
‘When a curse leaves a mouth of a person it looks, and if this curse found a way to the person it was aimed at, it would go to him, otherwise it would return back to the one from who it came from.’

So, I dislike to be in the path of a curse.’

[Collected by Ahmad, al-Bayhaqi in ‘Shu’ab’ & Al-Albaani said the hadeeth is Hasan at the very least because it has a supporting narration No. 1269]



Arabic
عن عمر بن ذر عن العيزار بن جرول الحضرمي قال: ” كان منا رجل يقال له أبو عمير، قال وكان مؤاخيا لعبد الله (يعني ابن مسعود) فكان عبد الله يأتيه في منزله، فأتاه مرة، فلم يوافقه في المنزل، فدخل على امرأته، قال: فبينا هو عندها إذ أرسلت خادمتها في حاجة، فأبطأت عليها فقالت: قد أبطأت، لعنها الله ! قال: فخرج عبد الله فجلس على الباب.
قال: فجاء أبو عمير، فقال لعبد الله:

ألا دخلت على أهل أخيك؟ قال: فقال: قد فعلت ولكنها أرسلت الخادمة في حاجة،
فأبطأت عليها فلعنتها وإني سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول: 
( إذا خرجت اللعنة من في صاحبها نظرت، فإن وجدت مسلكا في الذي وجهت إليه وإلا عادت إلى الذي خرجت منه “

وإني كرهت أن أكون لسبيل اللعنة “

أخرجه أحمد (1 / 408) والبيهقي في ” الشعب ” (2 / 92 / 2) وقال الألباني وعلى كل حال فالحديث حسن على أقل الأحوال لأن له شاهدا من حديث أبي الدرداء.
الألباني  في سلسلة الأحاديث الصحيحة وشيء من فقهها وفوائدها رقم 1269

Urdu

سلسله احاديث صحيحه
التوبة والمواعظ والرقائق
توبہ

عیزار بن جرول حضرمی کہتے ہیں: ہم میں ایک ابوعمیر نامی آدمی تھا، جس کا رشتہ اخوت سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے قائم تھا، سیدنا عبداللہ اس کے گھر آتے جاتے رہتے تھے۔ ایک دن وہ آئے لیکن سیدنا ابوعمیر رضی اللہ عنہ گھر پر نہیں تھے، وہ اس کی بیوی کے پاس بیٹھ گئے۔ بیوی نے اپنی خادمہ کو کسی کام کے لیے بھیج دیا، اس نے واپس آنے میں تاخیر کی۔ (جس کی وجہ سے) اس نے کہا: میری خادمہ پر اللہ لعنت کرے، اس نے بہت دیر کر دی ہے۔ سیدنا عبداللہ رضی اللہ عنہ باہر آ گئے اور دروازے پر بیٹھ گئے۔ جب سیدنا ابوعمیر رضی اللہ عنہ واپس آئے تو انہیں کہا: آپ اپنے بھائی کے اہل کے پاس تشریف رکھتے۔ انہوں نے کہا: میں نے تو ایسے ہی کیا تھا، لیکن اس نے خادمہ کو کسی کام کے لیے بھیجا اور اس نے بہت تاخیر کر دی، جس کی وجہ سے اس نے اس پر لعنت کی اور میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا: ”جب لعنت ولا لعنت کرتا ہے تو دیکھا جاتا ہے کہ آیا وہ آدمی، جس پر لعنت کی گئی ہے، اس کا مستحق ہے۔ اگر (وہ حقدار) ہو تو ٹھیک وگرنہ وہ لعنت، لعنت کرنے والے کی طرف لوٹا دی جاتی ہے۔“ اور میں نے ناپسند کیا لعنت کے راستے پر بیٹھوں۔

سلسله احاديث صحيحه ترقیم البانی: حدیث نمبر 1269

%d bloggers like this: