A Good Ending

A Good Ending
حُسن الخاتمة

Translated by
Abbas Abu Yahya



Shaykh Muhammad bin Salih al-Uthaymeen said:

‘The goal of having a good ending is not that you die whilst you are in the masjid, or while you are upon a prayer mat, or you die with a Qur’aan in your hands.

Indeed the best of all creation died while he was on his bed.

His friend as-Siddiq Abu Bakr died while on his bed, and he was the best of the Companions.

Khalid bin Waleed died while he was on his bed, and he was given the title the unsheathed sword of Allaah, who plunged into a hundred battles and did not lose in any of them.

However, a good ending is:
• that you die and are far away from Shirk.

• that you die and are far away from Nifaq (hypocrisy).

• that you die and you are separate from the people of Bida and far away from Bida.

• that you die and you are upon the Book, the Sunnah and believe in that which is brought in them without twisting their meanings.

• that you die and you are relieved of the burden of spilling the blood of the Muslims, their wealth and their honour. That you fulfill the right of Allaah upon you and the right of Allaah’s worshippers upon you.

• that you die and your heart is secure with pure intentions and good manners; and does not have hatred, envy, nor spite for a Muslim.

• That you pray your five prayers on their times in Jama’ah (Congregation) for the one who has to pray in congregation. Also to fulfill what Allaah has obligated upon you.

O Allaah make all our final matters good. Save us from disgrace in the Duniya and the punishment of the Hereafter.

O Allaah make our final end good and return us to you in a beautiful way not disgraced and exposed.’

[Fatawa noor ala darb]



*Arabic*

حُسن الخاتمة

قال الشيخ العلامة محمد بن صالح العثيمين – رحمه الله تعالى – :

” ليس المقصود من حسن الخاتمة أن تموت و أنت في المسجد أو على سجادة الصلاة أو تموت و المصحف بين يديك .
فقد مات خير البرية جمعاء و هو على فراشه . مات صديقُه الصديقُ أبو بكر و هو خيرُ الصحابة على فراشه . مات خالد بن الوليد على فراشه و هو الملقب بسيف الله المسلول و الذي خاض ١٠٠ معركة و لم يخسر أياً منها .

– و لكِنَّ حُسْنَ الخاتمة :
✓• أن تموتَ و أنت بريءٌ من الشرك .
✓• أن تموتَ و أنت بريءٌ من النفاق .
✓• أن تموتَ و أنت مفارقٌ للمبتدعة بريءٌ من كل بدعة .
✓• أن تموتَ و أنت على الكتاب و السنة و مؤمنٌ بما جاء فيهما دون تأويل .
✓• أن تموتَ و أنت خفيفُ الحمل من دماء المسلمين و أموالِهم و أعراضِهم ، مؤدياً حق الله عليك و حق عباده عليك .
✓• أن تموتَ سليمَ القلب طاهرَ النوايا و حَسَنَ الأخلاق ؛ لا تحملُ غلاً و لا حقداً و لا ضغينةً لمسلم .
✓• أن تصلي خمسَكَ في وقتها مع الجماعة لمن لهم حقُّ الجماعة و تؤدي ما افترضه اللهُ عليك .

اللهم أَحسنْ عاقبتَنا في الأمور كلِّها و أجرْنا من خزي الدنيا و عذابِ الآخرة .
اللهم أَحسنْ خاتمتَنا و ردَّنا إليك مرداً جميلاً غير مخزٍ و لا فاضحٍ .

 |[ فتاوى نور على الدرب ]| .

*Urdu*

خا تمہ با لحسن

حُسن الخاتمة
شیخ محمد بن صالح العثیمین نے کہا:

’’اچھا انجام پانے کا مقصد یہ نہیں ہے کہ آپ اس وقت مریں جب آپ مسجد میں ہوں،
یا آپ نماز کی چٹائی پر ہوں،
یا آپ اپنے ہاتھوں میں قرآن لے کر مر جائیں۔

درحقیقت تمام مخلوقات میں سے بہترین کی موت اس وقت ہوئی جب وہ اپنے بستر پر تھے۔

ان کے دوست صدیق ابو بکر رضی اللہ عنہ کا انتقال ان کے بستر پر تھا اور وہ سب سے اچھے صحابہ تھے۔

خالد بن ولید کا انتقال اس وقت ہوا جب وہ اپنے بستر پر تھے، اور انہیں اللہ تعالی کی غیر منقطع تلوار کا خطاب دیا گیا، جس نے سو جنگیں کیں اور ان میں سے کسی میں بھی شکست نہیں ہوئی۔

تاہم، ایک اچھا اختتام ہے:
• کہ تم مرجاؤ اور شرک سے دور ہو۔

یہ کہ تم مرجاؤ اور نفاق سے دور ہو۔

• یہ کہ آپ مر جائیں اور آپ بدعة کے لوگوں سے الگ ہوں اور بدعة سے بہت دور ہوں۔

• یہ کہ آپ مر جائیں اور آپ کتاب وسنت پر ہوں اور ان کے معانی کو توڑ مروڑائے بغیر اس پر ایمان لاؤ۔

یہ کہ آپ مر جائیں اور آپ مسلمانوں کے خون، ان کے مال اور ان کی عزتوں کے بوجھ سے آزاد ہو جائیں۔  کہ تم پر اللہ کا حق اور اللہ کے بندوں کا تم پر حق ادا کرو۔

یہ کہ آپ مر جائیں اور آپ کا دل خالص نیتوں اور اچھے اخلاق کے ساتھ محفوظ رہے۔  اور کسی مسلمان سے نفرت، حسد اور کینہ نہیں رکھتا۔

• یہ کہ آپ اپنی پانچ نمازیں ان کے اوقات میں باجماعت ادا کرنے والے کے لیے پڑھیں۔  نیز اللہ تعالیٰ نے جو تم پر فرض کیا ہے اسے پورا کرنا۔

یا اللہ ہم سب کے آخری معاملات ٹھیک فرما۔  ہمیں دنیا کی رسوائی اور آخرت کے عذاب سے بچا۔

اے اللہ ہمارا انجام اچھا کر اور ہمیں اپنی طرف خوبصورت انداز میں واپس کردے نہ کہ رسوا اور بے پردہ۔

[فتاویٰ نورالادرب]

%d bloggers like this: